In every age we will return

Poet: Juman Darbadar

 

Waves rising in the Sindhu river, that is all we desire
The poor bathing in the Sindhu, that is all we desire
We've lived in misery for ages now, my Lord 
Let waves rise in the Sindhu now, that is all we desire

In every age, we will return 

My love, on the banks of Sindhu we will meet
When the darkness passes, on that full moon night we will meet

This long, relentless war of ours, we will champion like stallions wild
The enemy will die at last – on that scented day we will meet

The martyrs of our land have done us a million favours
On their altars crimson-soiled, we will meet

In Europe, or Lebanon, wherever men are killed,
In the midst of their massacred wishes, we will meet

Again the rains will come, these barren lands will wash again
Again the people will dance, in these rains we will meet

In every age, my love, on the banks of Sindhu we will meet

 

Translated by Asad Alvi

لیکر ہر ہر جنم پھر سے

شاعر: جمن دربدر

 

ہوں مہران میں موجیں وو وو وو

 ہوں مہران میں موجیں

ہمیں بس اور کیا چاہیے

سارے مسکیں کریں موجیں 

ہمیں بس اور کیا چاہیے

 صدائيں سختیاں سن لے تو 

سکھ بھر سندہ کے سانئيں

ہوں بس سندہ  پر اوجیں

ہمیں بس اور کیا چاہیے

 

لیکر ہر ہر جنم  پھر سے سجن مہران میں ملنا 

جب تاریکی ختم ہو جائے گی

میٹھی اس چاندنی میں پھر ملنا

 

اپنی جنگ جاری ہے جو آخرکار جیتیں گے

مرجائیں گے سب دشمن سچی خوشبو میں پھر ملنا

 

یورپ کہ ہو لبنان ہر جا مارا گيا انسان

اسی انسان کے ارمان لہو گلریز میں ملنا

  

ہوئے جو قوم پر قربان انکے لاکھوں ہیں احسان

شہیدوں کے لہو سے لال اسی لالی میں  پھر ملنا

  

پھر ساون لوٹ آئيں گے میدانوں پر برسیں گے

خوشی سے لوگ جھومیں گے

انہی بس بارشوں میں، ملیں گے تم  اور ہم پھر سے

 

لیکر ہر ہر جنم  پھر سے سجن مہران میں ملنا

 

   

    ٰترجمہ : حسن مجتبی