ترمیم

شاعر: شکھر گوئیل

شاعر بیٹھا رات سے
چڑھا اتار کر دیکھ رہا ہے
ایک خیال کے تن پر
چند نظموں کے لباس

جیسے ماں دکان پر کپڑوں کی
پہنا پہنا کر دیکھتی ہے
اپنے بچے کو سارے کپڑے

وه کتر دیتا ہے کبھی 
کچھ شبد مصرعوں کے انت سے
کہہ کر، "بازو بشرٹ کی
لمبی ہے تم پر
"!ذرا فولڈ کرکے پہنو تو

کبھی، بدل دیتا ہے
مصرعے کو کہہ کر
دیکھو نہ ، کندھے لٹکتے ہیں کتنے"
"!ایک سائز چھوٹا ہو، تو بیٹھے

کچھ بھاری شبدوں کے
ہلکے ہم معنی الفاظ ڈھونڈتا ہے
کہہ کر - "بہت موٹے لگتے ہو اِن میں
!ذرا ڈھیلے کپڑے پہنا کرو
نہیں۔۔۔ اب فیشن
"!زیاده ٹائِٹ ٹی شرٹس پہننے کا

وه آلٹر کرنا چاہتا ہے
نظم کے پائِنچوں کی لمبائی
خیال کو سمجھا کر کی
-تمھارے پاوُں ابھی چھوٹے ہیں "
زیاده لمبی رکھی
"!تو تم گندی کرو گے

خیال کے رنگ سے میچنگ
رنگ ڈھونڈ رہا ہے آسمان کا
،کہہ کر، "اداس ہو تم بہت
تم پر دیکھو شاید
"!دوپہر کی ویرانی پھبے

اور خیال رات بھر
بدل بدل کر کپڑے
اب اوبھ گیا ہے
نیند بھری آنکھوں سے
کہہ رہا ہے اب جنجھلا کر
کیا فرق پڑتا ہے شاعر
کوئی بھی لے لے
!ویسے بھی تجھے کوئی نہیں پڑھتا

 

ترجمہ :  سید محمد اسلم اورسید عفان اسلم

Alteration

Poet: Shikhar Goel

Since night fell,
the poet
is trying on and taking off the body of a thought
the clothes of a few poems

as a mother at a clothes shop
makes her child try on
all the clothes

sometimes he trims -
a few words from the end of a line
saying, ‘the shirt’s arm
is too long for you,
see how it looks folded!’

sometimes, he changes
a line
saying to it,
‘look how the shoulders droop,
a size smaller, and it would sit better!’

for some heavy words
he looks for light synonyms
saying, ‘you look too fat in these,
you should wear looser clothes!
the fashion now
is not to wear tight t-shirts!’

he wants to alter
the length of the poem’s trousers
by persuading the thought,
‘your legs are still short –
if you keep them too long –
you will dirty them!’

matching the colour of the thought,
he is searching for the colour of the sky,
saying, ‘you are very sad,
see if perhaps
the afternoon’s desolation suits you!’

and the thought,
having changed clothes all night,
is now languorous,
its eyes heavy with sleep
are now saying irritably,
what difference does it make poet,
take whichever,
who reads you anyway!

 

Translated by Nauman Naqvi