A Song Everlasting

Poet: Attiya Dawood

Poetic Artist: Suhaee Abro

 

Swearing by the name of this earth

I had promised to love you,

This very earth

Has been opened like a grave for us.

All the flowers in my country have been picked

And gunpowder planted instead.

Fragrance breathes its last

In a torture camp.

The very lane where hand in hand with you

I have danced to the music of peace,

There a death-dealer is spread-eagled.

My “garbi” shalwar, “tik” dupatta and “khumbo”

I have hidden away in a box.

My own identity I have swallowed like a bitter pill.

Walking along with you and looking at the full moon

I cannot recite Bhittai’s “bait” to you,

The sound of Kalashnikovs

Makes my child get up from sleep.

I open my lips to sing a lullaby

And everybody else in the home

Puts a finger on their lips,

Gesturing me to remain silent.

Newspapers, like the nails of a witch

Tear off a bit of my flesh every day.

Politician’s statements

Are repeated parrot-like.

I don’t want to be sucked in by a swamp of fear.

Song-makers of my land!

Write for me an everlasting song

So that I can break the shackles of my tyranny

And dance again in ecstasy.

 

Translated by Asif Farrukhi

امر گيت

شاعر: عطیہ داوُد   

شاعرانہ فنکار: سہائے ابڑو  

 

جس دھرتی کی قسم کھا کر 

تجھ سے عہد نبھانے کا وعدہ کیا تھا،

اس دھرتی کو ہمارے لئے قبر بنا دیا گیا ہے

دیس کے تمام پھول توڑ کر

بارودکاشت کردیا گیا ہے۔

اور خوشبو ازیت گاہ میں آخری سانسیں لے رہی ہے۔

جن گلیوں میں، تیرا ہاتھ تھام کر

امن کی تال پر میں نے صدیوں رقص کیا تھا۔

وہاں موت کے سوداگر نے اپنے پنکھ پھیلادیئے ہیں۔

سوسی کی شلوار، گج لگا چولا سرخ چزیا

میں نے صندوق میں چھپادیئے ہیں۔

اپنی پہچان کو اپنے منہ میں رکھ کر نگل گئی ہوں۔

راہ چلتے آسمان پر چودھویں کا چاند دیکھ کر 

میں تجھے بھٹائی کا کلام نہیں سنا سکتی۔

کلاشنکوف کے دھماکوں سے میرا بچہ

سوتے سوتے چونک اٹھتا ہے

میں اسے لوری سنانے کے لئے لب کھولوں

تو گھر والے ہونٹوں پر انگلی رکھ کر

خاموش رہنے کا اشارہ کرتے ہیں۔

اخبار ڈائنوں کے ناخن بن کر 

ہر روز گوشت نوچ رہے ہیں میرا۔

اور سیاست دانوں کے بیان

طوطے کی مانند لگتے ہیں۔

میں خوف کی دلدل میں ہاتھ پیر مارنا نہیں چاہتی۔

اے میرے دیس کے تخلیق کار

ایسا لکھ ڈال کوئی امرگیت

کہ جبر کی سب زنجیریں توڑ کر

میں چھم چھم، چھم چھم، ناچ اٹھوں۔