Danatum Passu

Poet: Shahid Akhtar

Poetic Artist: Zoheb Veljee

 

"Passu’s open field grows pearl-like wheat"

O beloved, this is an ancient saying

Alas, only half my village remains

Do not despair, it remains bountiful even today

 

Salute to my ancestors 

Salute to their services

Salute to my Pure Spirits

Salute to my elders

 
 

This is the village of the Notables of Quli 

Where lives a renowned dignitary

How shall I compare this friend of mine

For his hospitality is admired far and wide

 

In my garden are flowers of many colors

They alone console my heart

The children here are the pearls of my river

They are the falcons that roam my mountains                         

 

From Doot to Yuksh Goze

From the Edge of the Glacier to the Spirited Pasture

It is rich with nature’s bounties

I sacrifice myself to such a village

 

Obliterating their ancestral traditions

They say we have progressed

Those who forget the language of their elders

Are wiped out from the face of this earth. 

 
 

Translated by Nosheen Ali

دنٹم پَسوُ

شاعر: شاہد اختر   

شاعرانہ فنکار: زوہیب ویلجی  

 

'پَسوُ کے کھُلے میدان میں موتی جیسی گندم' 

اے جان یہ ایک قدیم قول ہے 

افسوس میرا گاؤں اب آدھا رہ گیا ہے 

مایوس نہ ہوں، آج بھی یہ رزق سے بھرپور ہے 

 

سلام میرے آباؤاجداد کو 

سلام اُن کی خدمات کو 

سلام میری پاک روحوں کو 

سلام میرے بزرگوں کو 

 

یہ اربابِ قُلی کا گاؤں ہے

وہاں رہتا ہے ایک بڑے نام والا  

ہمارے اس یار کی میں کیا کیا مثال دوں 

کہ اس کی مہمان نوازی کا چرچا دور تک ہے 

 

میرے اس چمن میں رنگ رنگ کے پھول ہیں

یہی میرا دل بہلاتے ہیں 

یہی بچے میرے دریا کے موتی ہیں 

یہی میرے پہاڑوں کے شاہین ہیں 

 

ڈوٹ سے یکش گوز تک 

یاز سم سے پری گوز تک 

یہ قدرتی رزق سے مالامال ہے 

ایسے گاؤں پہ میری جان فدا ہے 

 

اپنےآباؤاجداد کی روایات کو مٹا کر

کہتے ہیں ہم نے ترقی کی ہے 

جو اپنے باپ دادا کی زبان بھول گئے 

وہ روے زمین سے مٹ گئے

 

مترجم: زوہیب ویلجی اور جاوید علی خان