Muezzin!

شا‏عر: آسی  زمینی

 

او مؤذن! ذرا آہستہ

اس مسجد کے اس باجو میں

کسی محنت کش کے فاقہ کش

بچوں کی ابھی آنکھ لگی ہے

 

او مؤذن! ذرا آہستہ

دیکھ

 بچہ نہ کہیں کوئی جاگ  پڑے

اور چولہا اپنا ٹھنڈا دیکھ کر

کہیں ماں کا نہ کلیجہ پھٹ جائے

او مؤذن! ذرا آہستہ

 

دیکھ دور کہیں کسی مل سے

آواز ہے گونجی گھنٹے کی

اور دور سے دھواں چمنی کا

ہے کھینچے مجھ کو اپنی طرف

او مؤذن! ذرا آہستہ

یہ گھنٹہ مقدس ہے میرے لیے

جو میری بھوک مٹاتا ہے

اور چولہا روشن کرنے کو 

لاتا ہوں چنگاری اس چمنی سے

او مؤذن ذرا آہستہ

پر لیکن

تو پلا ہوا من و سلویٰ کا

تو میری بات کیا سمجھے گا

 کہ آنتوں کے شور و غل میں 

آواز اذاں ہے بے معنی

 

مترجم: حسن مجتبہ 

 

Muezzin!

Poet: Aasi Zameeni

 

o muezzin! a bit softly

here,

near this mosque,

a worker’s starving children

have only just drowsed off

 

o muezzin! a bit softly

careful

lest a child awakes

and seeing her hearth cold,

the mother’s heart shatters

 

o muezzin! a bit softly

listen,

the bell of some distant mill

echoes

and from far away

its chimney smoke

beckons me

 

o muezzin! a bit softly

this hour is sacred to me

this hour that slakes

my hunger

and to light the hearth

I bring a spark

from this chimney

 

o muezzin! a bit softly

but you,

fed on manna from heaven,

what sense can I make to you –

amidst the roar of my guts

the call to prayer is meaningless

 

Translated by Nauman Naqvi